The Mont Saint Michel History in Urdu

The Mont Saint Michel History in Urdu

فرانس میں واقع مونٹ سینٹ مائیکل گرجہ گھر

ویسے تو دُنیا میں بہت  سے خوبصورت اور حیرت انگیز عمارتیں اور تعمیرات موجود ہیں اور ان کے بنانے والوں نے اپنے فن کا بھرپور مظاہرہ کیا ہے ۔ مگر کچھ عمارات اور محلات ایسے بھی ہیں جنہیں  خوبصورتی اور دلکشی میں انتہا کا درجہ دیا جاسکتا ہے اور ہم یہ یقین سے کہہ سکتے ہیں کہ جو بھی انہیں دیکھے گا وہ ان عمارات اور ان کے بنانے والے کاریگروں کی کاریگری کی تعریف کئے بغیر نہ رہ سکے گا۔  ایسی ہی ایک خوبصورت اور دلکش عمارات ماؤنٹ سینٹ مائیکل کی بھی ہے جو فرانس    کے شمال میں  واقع ایک جزیرے پر تعمیر کیا گیا ہے۔ یہ جزیرہ فرانس کے شمالی  سرحد کے نزدیک برٹینی اور نارمنڈی کی سرحد ات پر واقع ہے۔

یہ گرجا ایک حیران کن جگہ پر تعمیر کیا گیا ہے اس کی تعمیر ایوبرٹ نے کروائی تھی۔ اس وقت یہ جزیرہ مونٹ ٹومب کے نام سے مشہورتھا۔ ایوبرٹ نے جو تعمیر شروع  کروائی تھی ما بعد وہ دنیا کے عجوبوں میں سے ایک عجوبہ ثابت ہوئی۔

اولین گرجا ۱۰۱۷ ء اور ۱۱۴۴ ء کے درمیان تعمیر کیا گیا تھا ۔ یہ گرجا ایک پرانے گرجے کے کھنڈرات پر تعمیر کیا گیا تھا۔ آئندہ تین صدیوں کے دوران مزید عمارات تعمیر کی گئیں۔ ان میں وہ مقامات بھی شامل تھے جو ۱۲۱۱ ء ااور ۱۲۲۸ ء کے دوران اس گرجے کا حصہ بنے تھے۔ یہ جگہ ان ہزاروں زائرین کے سمانے کے لئے کافی ہے جو گرجے کو دیکھنے کیلئے آتے ہیں۔ یہ گاتھی طرز تعمیر کی عمارات ” حیران کن” عمارات کہلاتی ہیں۔ اور حقیقی معنوں میں گوتھی طرز تعمیر کا عجوبہ ہیں۔  انگلستان کے ساتھ ایک ہزار سالہ جنگ کے دوران بھی اس گرجے کی جانت جانے والی ٹریفک معطل نہ ہوئی تھی اور انگریز فوج کے دستے جو اس گرجا گھر کی اردگرد کی زمین پر قابض تھے وہ ان لوگوں کو محفوظ راستہ فراہم کرتے تھے جو گرجا گھر جانے کے خواہش مند ہوتے تھے۔  ۱۴ ویں صدی میں اس کے ارد گرد ایک حفاظتی دیوار تعمیر کی گئی تھی۔ گرجے کا مشرقی حصہ جو کہ پادری کے لئے مخصوص تھا اس کے مسمار ہونے کے بعد اس کی جگہ ایک نیا حصہ تعمیر کیا گیا جو گاتھی طرز تعمیر کا حامل تھا۔

Recommended:   A Landscape Picture of Jame Masjid Delhi

یہ گرجا گھر زمین سے بالکل علیحدہ ہے ۔ اس گرجے تک پہنچنے کے لئے ۱۸۸۰ ء میں ایک لمبا راستہ بنایا گیا جو  کہ اس گرجے کو زمین سے ملاتا ہے۔ بہت سے سیاح  ہر سال اس گرجے کو دیکھنے کے لئے آتے ہیں  جن کی تعداد چار ملین سالانہ ہے۔

اس گرجے کے اردگرد ایک دیہات واقع ہے جو کہ گرجے کی حفاظتی دیوار اور سمندر میں گھرا ہوا ہے۔ ہزاروں زائرین اس گرجے کی زیارت کے لئے آتے ہیں اور آج کل دوکانیں اور ریسٹورنٹ جدید زائرین کو کھانے پینے کی اشیاء فراہم کرنے کا ذریعہ بنے ہوئے ہیں۔

The Mont Saint Michel History in Urdu

This tiny island, about two thirds of a mile across and 250 feet high, is Mont Saint Michel, on the north coast of France near the border of Brittany and Normandy. At high tide it is about a mile from the shore. At low tide (before the causeway was built in 1870). Only sand separated it from the mainland a very dangerous walk, however, because the tide rolled in so quickly. It was said that a galloping horse could hardly cover the distance between the island and the mainland before being overtaken by the tide . The first chapel on this island was founded in 708 by Bishop Aubert of Avranches,  after the archangel Michacl appeared to him in dream. In 1017 About Hilbert. It began the magnificent abbey church you can see today, which was not completed till 1520. After the French Revolution, the island became a prion for a while (called “Mont Libre”), but since 1872 France has cared for it as a national monument.   

Leave a Reply

Your email address will not be published.